Friday, 31 October 2014

Thursday, 23 October 2014

Cotten low prices .Comemned by Kisan Bord Pakistan.Nawai waqt store.23-10-2014

 Cotten low prices .Comemned by Kisan Bord Pakistan.Nawai waqt store.23-10-2014
http://www.nawaiwaqt.com.pk/business/23-Oct-2014/335824


 

وئی کی عدم خریداری، ٹریڈنگ کارپوریشن نے کسان دشمنی کا ثبوت دیا: کسان بورڈ

23 اکتوبر 2014 0
روئی کی عدم خریداری، ٹریڈنگ کارپوریشن نے کسان دشمنی کا ثبوت دیا: کسان بورڈ

لاہور (کامرس رپورٹر) مرکزی صدر کسان بورد پاکستان سردار ظفر حسین خان نے صوبائی صدور کسان بورڈ کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ٹی سی پی کی جانب سے روئی کی خریداری نہ کرنے سے نرخوں میں مسلسل کمی آرہی ہے۔ ملک کی نقد آور فصل کپاس کے نرخوں کا بحران حکومتی اداروںکی عدم دلچسپی اور نااہلی کی وجہ سے شدت اختیار کر گیا ہے۔ حکومتی دعوئوں کے برعکس ٹریڈنگ کارپوریشن نے خریداری عمل میں حصہ نہ لے کر کسان دشمنی کا ثبوت دیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس وقت 70فیصد چھوٹے کسان اپنی فصل کا بڑا حصہ اونے پونے فروخت کر چکے ہیں باقی 30فیصد بڑے کاشت کار، جاگیردار جو کہ فصل کی پیداوار ہولڈ کرنے کی گنجائش رکھتے ہیں انھیں اس نقصان سے بچایا جاسکتا ہے۔ مرکزی صدر نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ٹی سی پی کو خریداری عمل فوری شروع کرنے کے احکامات جاری کرے اور کپاس کے کاشت کاروں کو مزید لٹنے سے بچایا جائے۔ انھوں نے کہا کہ اگر خریداری عمل میں مزید تاخیر ہوئی تو اس وقت تک 90فیصد پھٹی کسانوں کے ہاتھوں سے جاچکی ہو گی۔ مزید برآں ٹی سی پی کو خریداری ہدف بڑھانے کے احکامات بھی جاری کیے جائیں۔

 

 

 

 Cotten low prices and Kisan Bord Pakistan.23-10-2014

ٹریڈنگ کارپوریشن کپاس کی فوری خریداری شروع کرے۔کسان بورڈ


لاہور22اکتوبر2014ء:مرکزی صدر کسان بورد پاکستان سردار ظفر حسین خان نے صوبائی صدور کسان بورڈ کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ٹی سی پی کی جانب سے روئی کی خریداری نہ کرنے سے نرخوں میں مسلسل کمی آرہی ہے۔ ملک کی نقد آور فصل کپاس کے نرخوں کا بحران حکومتی اداروںکی عدم دلچسپی اور نااہلی کی وجہ سے شدت اختیار کر گیا ہے۔ حکومتی دعوﺅں کے برعکس ٹریڈنگ کارپوریشن نے خریداری عمل میں حصہ نہ لے کر کسان دشمنی کا ثبوت دیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس وقت 70فیصد چھوٹے کسان اپنی فصل کا بڑا حصہ اونے پونے فروخت کر چکے ہیں باقی 30فیصد بڑے کاشت کار، جاگیردار جو کہ فصل کی پیداوار ہولڈ کرنے کی گنجائش رکھتے ہیں انھیں اس نقصان سے بچایا جاسکتا ہے۔ مرکزی صدر نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ٹی سی پی کو خریداری عمل فوری شروع کرنے کے احکامات جاری کرے اور کپاس کے کاشت کاروں کو مزید لٹنے سے بچایا جائے۔ انھوں نے کہا کہ اگر خریداری عمل میں مزید تاخیر ہوئی تو اس وقت تک 90فیصد پھٹی کسانوں کے ہاتھوں سے جاچکی ہو گی۔ مزید برآں ٹی سی پی کو خریداری ہدف بڑھانے کے احکامات بھی جاری کیے جائیں۔

Saturday, 11 October 2014

SUGER CANE PRICE REJECTED BY KISAN BORD PAKISTAN NAWAI WAQT,Express,JANG,PAKISTAN,NAI BAAT,DUNYA,PAKISTAN. .11-10-2014



 SUGER CANE PRICE REJECTED BY KISAN BORD PAKISTAN NAWAI WAQT,Express,JANG,PAKISTAN,NAI BAAT,DUNYA,PAKISTAN. .11-10-2014



http://www.nawaiwaqt.com.pk/business/11-Oct-2014/333377

کسان اتحاد اور حکومت کے مذاکرات کامیاب بجلی بلوں پر جی ایس ٹی نہیں لیا جائیگا : گنے کی قیمت 180 روپے من قبول نہیں : کسان بورڈ
11 اکتوبر 2014 0
لاہور(نیوزرپورٹر) حکومت پنجاب اور پاکستان کسان اتحاد کے درمیان مذاکرات کامیاب ہوگئے ہیں۔جس کے مطابق کاشتکار رہنماوں کے خلاف درج مقدمات واپس لے لئے جائیں گے، بجلی کے فلیٹ نرخوں پرجی ایس ٹی نافذ نہیں کیا جائے گا۔ ٹی سی پی 3000 روپے فی من کے حساب سے کپاس خریدے گی۔ جبکہ گنے، چاول اور مکئی کی آئندہ قیمتوں کے تعین کے لئے کمیٹی قائم کردی گئی ہے۔پاکستان کسان اتحاد کے مطابق پی کے آئی کے چیرمین چودھری محمد انور کی سربراہی میں مرکزی صدر راﺅ طارق اشفاق، صوبائی صدر پنجاب رانا غلام قادر، ارشد لالیکااورچودھری احمد بلال نے محکمہ زراعت ،صنعت ،خوراک اور آبپاشی کے صوبائی سیکرٹریز سے ملاقات میںکاشتکاروں کے مسائل کی وضاحت کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں بجلی کے بل معاف کئے جائیں اور آئندہ فصل کے لئے بیج اور کھاد مفت فراہم کی جائے۔ حکومت پنجاب نے پاکستان کسان اتحاد کے وفدکے مطالبے کوتسلیم کرتے ہوئے ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان کے ذریعے 3000 روپے فی من کپاس کی خریداری، احتجاجی مظاہروں کے دوران پی کے آئی کی قیادت اور کارکنوں کے خلاف درج مقدمات واپس لینے کا اعلان کیا۔دریں اثنا کسان بورڈ پاکستان نے پنجاب حکومت کی طرف سے سال 2014-15 کے لےے گنے کی قیمت خرید 180 روپے فی 40کلوگرام مقرر کےے جانے کے فیصلے پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا۔کسان بورڈ نے حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ کسان دشمن روش چھوڑ دے۔ کسانوں کے مفادات کو نقصان نہ پہنچائے بصورت دیگر حکومت کو سخت ردعمل کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اجلاس میں اس بات کا بھی فیصلہ کیا گیا کہ پاکستان بھر میں تمام کاشت کار تنظیموں سے فوری رابطہ کیا جائے اور ملکی سطح پر اس فیصلے کے خلاف بھرپور احتجاج کیا جائے کیوں کہ موجودہ قیمت فروخت میں کاشت کاروں کے لاگت اخراجات پورے کرنا مشکل ہےں۔ اجلاس میں اس بات کا بھی فیصلہ کیا گیا کہ گنے کی امدادی قیمت کا ازسرنو تعین کیا جائے۔ سٹیک ہولڈرز سے مشاورت کے لےے موجودہ جاری کردہ نوٹیفکیشن واپس لیا جائے۔ حکومت پنجاب کو اس بات کی یاد دہانی کرواتے ہوئے کہا کہ قبل ازیں لاہور ہائی کورٹ نے ایک حکم جاری کیا تھا کہ امدادی قیمت کا تعین کرتے وقت سٹیک ہولڈر سے باہمی مشاورت کرنا ضروری ہے۔ گزشتہ سال محکمہ فوڈ پنجاب نے موقف اختیار کیا کہ آئندہ سال سے مشاورتی عمل کے ذریعے ہونے والے نقصان کا ازالہ کیا جائے گا اور آئندہ قیمتوں کا تعین باہمی مشاورت سے ہو گا۔ اس کے باوجود پنجاب حکومت کی ہٹ دھرمی بغیر مشاورت، دفاتر میں بیٹھے ہوئے اور زرعی کام سے نابلد افراد سے فیڈ بیک لے کر کسانوں کی پیٹھ میں خنجر گھونپ دیا۔


  SUGER CANE PRICE REJECTED BY KISAN BORD PAKISTAN PAKISTAN  .11-10-2014

 http://dailypakistan.com.pk/commerce/11-Oct-2014/151278

گنے کی قیمت خرید 180 روپے فی 40کلوگرام مقرر کےے جانے پر تحفظات

کامرس
0

لاہور(کامرس رپورٹر)مرکزی صدر کسان بورڈ پاکستان سردار ظفر حسین خان نے پنجاب حکومت کی طرف سے سال 2014-15 کے لےے گنے کی قیمت خرید 180 روپے فی 40کلوگرام مقرر کےے جانے کے فیصلے پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا اس سلسلے میں ایک ہنگامی اجلاس زیر صدارت مرکزی صدر کسان بورڈ پاکستان منعقد ہوا جس میں غربی، وسطی، شمالی، جنوبی پنجاب کے صدور نے شرکت کی اور حکومتی فیصلے کو کسان دشمنی قرار دیا۔ اجلاس میں حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ کسان دشمن روش چھوڑ دے۔ کسانوں کے مفادات کو نقصان نہ پہنچائے بصورت دیگر حکومت کو سخت ردعمل کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اجلاس میں اس بات کا بھی فیصلہ کیا گیا کہ پاکستان بھر میں تمام کاشت کار تنظیموں سے فوری رابطہ کیا جائے اور ملکی سطح پر اس فیصلے کے خلاف بھرپور احتجاج کیا جائے کیوں کہ موجودہ قیمت فروخت میں کاشت کاروں کے لاگت اخراجات پورے کرنا مشکل ہےں۔
 اجلاس میں اس بات کا بھی فیصلہ کیا گیا کہ گنے کی امدادی قیمت کا ازسرنو تعین کیا جائے۔ سٹیک ہولڈرز سے مشاورت کے لےے موجودہ جاری کردہ نوٹیفکیشن واپس لیا جائے۔ مرکزی صدر نے حکومت پنجاب کو اس بات کی یاد دہانی کرواتے ہوئے کہا کہ قبل ازیں لاہور ہائی کورٹ نے ایک حکم جاری کیا تھا کہ امدادی قیمت کا تعین کرتے وقت سٹیک ہولڈر سے باہمی مشاورت کرنا ضروری ہے۔ گزشتہ سال محکمہ فوڈ پنجاب نے موقف اختیار کیا کہ آئندہ سال سے مشاورتی عمل کے ذریعے ہونے والے نقصان کا ازالہ کیا جائے گا اور آئندہ قیمتوں کا تعین باہمی مشاورت سے ہو گا۔ اس کے باوجود پنجاب حکومت کی ہٹ دھرمی بغیر مشاورت، دفاتر میں بیٹھے ہوئے اور زرعی کام سے نابلد افراد سے فیڈ بیک لے کر کسانوں کی پیٹھ میں خنجر گھونپ دیا۔ انھوں نے کہا کہ زرعی شعبہ جو کہ پہلے ہی زبوں حالی کا شکار ہے اسے مزید تباہی کی طرف نہ دھکیلا جائے۔ مذکورہ اجلاس میں ایک متفقہ قرارداد کے ذریعے وزیر اعلیٰ پنجاب سے مطالبہ کیا کہ وہ اس مسئلے کی فوری انکوائری کروائیں اور کاشتکاروں کی دادرسی فرمائیں۔ جاری کردہ نوٹیفکیشن منسوخ کریں بصورت دیگر پاکستان بھر کے کاشت کار بالخصوص پنجاب کے کاشت کار راست اقدام اٹھانے پر مجبور ہوں گے اور اس کی تمام تر ذمہ داری حکمرانوں پر ہو گی۔